nazar bad utarne ka wazifa in urdu

‪NAZAR bad‬‏ کیلئے تصویری نتیجہ
ابو عمامہ را نے اپنے والد سحل بن را سے انکا اک روایت کی ہے کی جناب ) اور صحابہ را مکہ مكرمہ کی طرف ہوئے 
، جب واہ مقام کی وادی میں پہنچے تو سحل بن را غسل کرنے لگے ، انکا رنگ ( کلر ) گورا تھا اور جلد بہت خوسک رنگ تھی ، بنوں عادی بن كاعب كے اک صاحب عامر بن رابعہ نے انہیں غسل کرتے ہوئے دیکھا تو کہا : – ” ایسی جلد تو میں نے

کبھی کسی لڑکی کی بھی نہیں دیکھی ( یعنی کتنا خوبصورت رنگ ہے ) ، اِس پر سحل را تو وہیں زمین پر گر پڑے ، کسی نے آکر (  علیہ وسلم سے عرض کیا : – ” آئی ! کیا آپ سحل کو دیکھیں گے ، اللہ کی قسم ! واہ تو سَر بھی نہیں اٹھاتے ، انہیں کوئی آرام نہیں ہو رہا ( شاخت بخار ہے ) ، نبی فرمایا : – ” کیا تم اسکے بارے میں کسی کو دوشی ( گناہ گار ) سمجھتے ہو ؟ ؟ ” صحابہ نے کہا : – ” عامر بن نے انہیں کپڑے اتارتے دیکھا تھا ، جناب  علیہ عامر را تو طلب فرمایا ، اور انہیں فرمائی ، ارشاد فرمایا : – ” اک آدمی اپنے بھائی کو کیوں قتل کرتا ہے ؟ اگر تجھے اک چیز اچھی لگی تھی تو تو نے کی دعا کیوں نا دی ؟ ” پِھر فرمایا : – ” اسکے لیے اپنے انگ ( پارٹس آف باڈی ) دھو ( واش ) ” ، انہوں نے اک برتن میں چہرہ ، ہانتھ کھنیاں ، گھٹنے ، پیر ( فوٹ ) ، اور كے اندر والا حصہ ڈھوکر ( واہ پانی ) دے دیا ، واہ پانی ( واٹر ) سحل را پر ڈالا گیا ، اسکا طریقہ یہ ہوتا ہے کی جس کو نظر لگی ہو ، کوئی انسان پانی اسکے پیچھے کی طرف سے اسکے سَر ( ہیڈ ) اور کمر ( ویسٹ ) پر ڈال دے ، پِھر برتن بھی اسکے پیچھے ہی اُلٹا کرکے رکھ دے ، بحرحال سعد را كے ساتھ ایسا ہی کیا گیا تو واہ ٹھیک تھک ہوکر لوگوں كے ساتھ ہو گئے

( مسند اَحْمَد 2 / 486 ، ) ( امام ملک ، عین ، باب وضو ، منال عین ، 2 / ) 






 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here